Tuesday, 2017-09-26, 11:52 PM
TEHREER
The Place of Entertainment and knowledge
Welcome Guest | RSS
Site menu
Categories
غزلیاتنظمیں
منتخب اشعارقطعات
Quotationsانتخاب
Entries archive
Recent Blogs-->
Recent Comments-->
thnx inam

hahahah

Thnx inam

hahah nice

thnx inam

Our poll
Rate my site
Total of answers: 22
Main » 2012 » July » 7 » Darechy kol do dil ke
2:58 PM
Darechy kol do dil ke

دریچے کھول دو دل کے

غلط فہمی کی مکڑی نے
بڑی سرعت سے اک جالا سا بُن ڈالا
محبت اس کے تاروں میں الجھ کر
ہاتھ پاؤں مار کر بچنے کی کوشش کر رہی ہے
ایک مدت سے
وہ ذہنی کشمکش اور کرب کے اس جال سے
نکلے بھی تو کیسے؟
وہ کوئی روشنی اپنے دریچوں سے ادھر آنے نہیں دیتا
ہوائے اعتبار و باہمی الفت کے جھونکوں کو
وہ شہرِ دل کی گلیوں میں گزرنے ہی نہیں دیتا
مرے جذبوں کا سچ فہم و فراست کی فصیلوں سے
اترنے ہی نہیں دیتا
مگر ہر دن کی روپہلی کرن سے میں یہ کہتی ہوں
اسے گر ہو سکے تو اب حقیقت آشنا کر دو
ذرا گھر کے اندھیروں میں لگے ان شک کے جالوں میں
وفا کی ایک اس اجلی کرن کو کام کرنے دو
دریچے کھول دو دل کے 

Category: نظمیں | Views: 186 | Added by: Crescent | Rating: 0.0/0
Total comments: 0
Only registered users can add comments.
[ Registration | Login ]
Search
Login In
Recent Posts-->
Popular Threads-->
Recent Photos-->
Poetry blog
Copyright Tehreer © 2017