Saturday, 2017-11-18, 7:27 PM
TEHREER
The Place of Entertainment and knowledge
Welcome Guest | RSS
Site menu
Categories
غزلیاتنظمیں
منتخب اشعارقطعات
Quotationsانتخاب
Entries archive
Recent Blogs-->
Recent Comments-->
thnx inam

hahahah

Thnx inam

hahah nice

thnx inam

Our poll
Rate my site
Total of answers: 22
Main » 2012 » March » 29 » Jah ki khwahish e be faiz pe marne walay
8:08 PM
Jah ki khwahish e be faiz pe marne walay
جاہ کی خواہشِ بے فیض پر مرنے والے
کسی انسان کی عزت نہیں کرنے والے

وہی اب شہر کی نظروں میں شناور ٹھہرے
لبِ دریا جو کھڑے تھے کئی ڈرنے والے

کس قدر خواب میں ابھی شعر بنانے ہیں ہمیں
کتنے خاکوں میں ابھی رنگ ہیں بھرنے والے

وقت پر زور نہیں عمر چلی جاتی ہے
سینکڑوں کام پڑے ہیں ابھی کرنے والے

بھول ہوگی تو اُسے دل سے کریں گے تسلیم
ہم نہیں دوش کسی اور پر دھرنے والے

دیکھ لے آنکھ اٹھا کرہمیں اے سیلِ ہوس
نہیں اس شہر کے سب لوگ بکھرنے والے

پیار بٹنے سے کبھی ختم نہیں ہوگا امجد
دل کے دریا تو نہیں ہوتے کبھی اترنے والے

امجد اسلام مجد
Category: غزلیات | Views: 252 | Added by: Crescent | Rating: 0.0/0
Total comments: 0
Only registered users can add comments.
[ Registration | Login ]
Search
Login In
Recent Posts-->
Popular Threads-->
Recent Photos-->
Poetry blog
Copyright Tehreer © 2017