Sunday, 2017-11-19, 12:31 PM
TEHREER
The Place of Entertainment and knowledge
Welcome Guest | RSS
Site menu
Categories
غزلیاتنظمیں
منتخب اشعارقطعات
Quotationsانتخاب
Entries archive
Recent Blogs-->
Recent Comments-->
thnx inam

hahahah

Thnx inam

hahah nice

thnx inam

Our poll
Rate my site
Total of answers: 22
Main » 2012 » August » 20 » Kamyab hai wafa to bahany tarash lon
9:19 PM
Kamyab hai wafa to bahany tarash lon
کمیاب ہے وفا تو بہانے تراش لوں
چہرے نئے ہیں شہر پرانے تراش لوں

نسبت میری جبیں* کو انہیں پتھروں سے ہے
مشکل نہ تھا کہ آئینہ خانے تراش لوں

اوڑھے رہوں میں جلتی ہوئی دھوپ کی ردا
اور موسموں کے گیت سہانے تراش لوں

شبنم سے رہگزارِ سحر کا پتا کروں
مٹی سے رنگ و بُو کے خزانے تراش لوں

نومید مجھ سے میرا خدا آج بھی نہ ہو
زخموں کے خال و خد سے زمانے تراش لوں

میں جو اسیر ہوں تو خود اپنی نگہ کی ہوں
دل کی خوشی کو لاکھ فسانے تراش لوں

شام و سحر سے دور زمانہ ملے، تو میں
اِس بے قرار جاں کے ٹھکانے تراش لوں

اِک خواب اور فصلِ بہاراں کے نام ادا
آ کر کہا ہے موجِ ہوا نے تراش لوں

ادا جعفری
Category: غزلیات | Views: 161 | Added by: Crescent | Rating: 0.0/0
Total comments: 0
Only registered users can add comments.
[ Registration | Login ]
Search
Login In
Recent Posts-->
Popular Threads-->
Recent Photos-->
Poetry blog
Copyright Tehreer © 2017