Sunday, 2017-11-19, 12:29 PM
TEHREER
The Place of Entertainment and knowledge
Welcome Guest | RSS
Site menu
Categories
غزلیاتنظمیں
منتخب اشعارقطعات
Quotationsانتخاب
Entries archive
Recent Blogs-->
Recent Comments-->
thnx inam

hahahah

Thnx inam

hahah nice

thnx inam

Our poll
Rate my site
Total of answers: 22
Main » 2012 » May » 12 » Khalwat main kula hum pe ke bebak te wo bhi
8:28 PM
Khalwat main kula hum pe ke bebak te wo bhi
خلوت میں کھلا ہم پہ کہ بیباک تھی وہ بھی
محتاط تھے ہم لوگ بھی، چالاک تھی وہ بھی

افکار میں ہم لوگ بھی ٹھہرے تھے قد آور
پندار میں "ہم قامتِ افلاک" تھی وہ بھی

اسے پاس ِادب، سنگِ صفت عزم تھا اس کا
اسے سیل طلب، صورتِ خاشاک تھی وہ بھی

جس شب کا گریباں تیرے ہاتھوں سے ہوا چاک
اے صبح کے سورج، میری پوشاک تھی وہ بھی

اک شوخ کرن چومنے اتری تھی گلوں کو
کچھ دیر میں پیوستِ رگِ خاک تھی وہ بھی

جس آنکھ کی جنبش پہ ہوئیں نصب صلیبیں
مقتل میں ہمیں دیکھ کے نمناک تھی وہ بھی

دیکھا جو اسے، کوئی کشش ہی نہ تھی اس میں
سوچا جو اسے، حاصل اور ادراک تھی وہ بھی

جو حرف میرے لب پہ رہا زہر تھا محسن
جو سانس میرے تن میں تھی سفّاک تھی وہ بھی

محسن نقوی
Category: غزلیات | Views: 154 | Added by: Crescent | Rating: 0.0/0
Total comments: 0
Only registered users can add comments.
[ Registration | Login ]
Search
Login In
Recent Posts-->
Popular Threads-->
Recent Photos-->
Poetry blog
Copyright Tehreer © 2017