Saturday, 2017-11-18, 7:33 PM
TEHREER
The Place of Entertainment and knowledge
Welcome Guest | RSS
Site menu
Categories
غزلیاتنظمیں
منتخب اشعارقطعات
Quotationsانتخاب
Entries archive
Recent Blogs-->
Recent Comments-->
thnx inam

hahahah

Thnx inam

hahah nice

thnx inam

Our poll
Rate my site
Total of answers: 22
Main » 2012 » June » 5 » Khuda kary dil sada ko kuch pata na lagy
6:54 PM
Khuda kary dil sada ko kuch pata na lagy

خدا کرے دل سادہ کو کچھ پتا نہ لگے
سوادِ شہر کی اس کو کبھی ہوا نہ لگے

وہ اپنے دل میں سمندر چھپائے پھرتا ہے
کہ جس کی آنکھ میں آنسو بھی اک روا نہ لگے

یہ فاصلے بھی عجب کچھ فریب دیتے ہیں
ملا نہیں ہے جو صدیوں سے وہ جدا نہ لگے

ہم اس طرح سے چلو راستہ بدل جائیں
بچھڑتے وقت کسی کو بھی کچھ برا نہ لگے

یہ ایک جبرِ مسلسل کہاں تلک میں سہوں
کہ آئینہ بھی جو دیکھوں اسے بھلا نہ لگے

ہمارے نام پہ سارے گناہ لکھ ڈالو
تمہارے نام پہ اب بھی کوئی خطا نہ لگے

ہمارا حال وہی کر دو جو کہ عبرت ہو
دعا بھی مانگیں تو ہم کو کوئی دعا نہ لگے
Category: غزلیات | Views: 148 | Added by: Crescent | Rating: 0.0/0
Total comments: 0
Only registered users can add comments.
[ Registration | Login ]
Search
Login In
Recent Posts-->
Popular Threads-->
Recent Photos-->
Poetry blog
Copyright Tehreer © 2017