Sunday, 2018-11-18, 1:58 AM
TEHREER
The Place of Entertainment and knowledge
Welcome Guest | RSS
Site menu
Categories
غزلیاتنظمیں
منتخب اشعارقطعات
Quotationsانتخاب
Entries archive
Recent Blogs-->
Recent Comments-->
thnx inam

hahahah

Thnx inam

hahah nice

thnx inam

Our poll
Rate my site
Total of answers: 22
Main » 2012 » March » 18 » Roshni ke baab bantai jayange
0:29 AM
Roshni ke baab bantai jayange
روشنی کے باب بنتے جائیں گے
زخم جب مہتاب بنتے جائیں گے

چشمِ نم میں ڈوبنا چاہیں اگر
سینکڑوں گرداب بنتے جائیں گے

عشق جن کی زندگی میں ڈھل گیا
لوگ وہ نایاب بنتے جائیں گے

دوست بن کر جو ملیں گے راہ میں
درد کے اسباب بنتے جائیںگے

ہار بانہوں کا گلے میں ڈال کر
ہم تری محراب بنتے جائیں گے

تابِ نظارہ جو پیدا ہوگئی
اور بھی بیتاب بنتے جائیں گے

تیرے عکس ِناز سے اے دلربا
آئینے پر آب بنتے جائیں گے

جس قدر ہوں گی جہاں میں نفرتیں
خون کے سیلاب بنتے جائیں گے

اشک ان کی یاد میں لکھیں گے جو
عشق کے آداب بنتے جائیں گے
Category: غزلیات | Views: 284 | Added by: Crescent | Rating: 0.0/0
Total comments: 0
Only registered users can add comments.
[ Registration | Login ]
Search
Login In
Recent Posts-->
Popular Threads-->
Recent Photos-->
Poetry blog
Copyright Tehreer © 2018