Tuesday, 2017-10-17, 11:33 AM
TEHREER
The Place of Entertainment and knowledge
Welcome Guest | RSS
Site menu
Categories
غزلیاتنظمیں
منتخب اشعارقطعات
Quotationsانتخاب
Entries archive
Recent Blogs-->
Recent Comments-->
thnx inam

hahahah

Thnx inam

hahah nice

thnx inam

Our poll
Rate my site
Total of answers: 22
Main » 2012 » March » 29 » Mohabbaton main hawas ke aseer hum bhi nahi
8:09 PM
Mohabbaton main hawas ke aseer hum bhi nahi
محبتوں میں ہوس کی اسیر ہم بھی نہیں
غلط نہ جان کہ اتنے حقیر ہم بھی نہیں

نہیں ہو تم بھی قیامت کی تند و تیز ہوا!!
کسی کے نقشِ قدم کی لکیر ہم بھی نہیں

ہماری ڈوبتی نبضوں سے زندگی تو نہ مانگ
سخی تو ہیں مگراتنے امیر ہم بھی نہیں

کرم کی بھیک نہ دے اپنا تخت بخت سنبھال
ضرورتوں کا خدا تُو،فقیر ہم بھی نہیں

شبِ سیاہ کے "مہمان دار" ٹھہرے ہیں
وَگرنہ تیرگیوں کے سفیر ہم بھی نہیں

ہمیں بُجھا دے ہماری انا کو قتل نہ کر
کہ بے ضرر ہی سہی،بے ضمیر ہم بھی نہیں

محسن نقوی
Category: غزلیات | Views: 263 | Added by: Crescent | Rating: 0.0/0
Total comments: 0
Only registered users can add comments.
[ Registration | Login ]
Search
Login In
Recent Posts-->
Popular Threads-->
Recent Photos-->
Poetry blog
Copyright Tehreer © 2017