Saturday, 2017-11-18, 7:31 PM
TEHREER
The Place of Entertainment and knowledge
Welcome Guest | RSS
Site menu
Categories
غزلیاتنظمیں
منتخب اشعارقطعات
Quotationsانتخاب
Entries archive
Recent Blogs-->
Recent Comments-->
thnx inam

hahahah

Thnx inam

hahah nice

thnx inam

Our poll
Rate my site
Total of answers: 22
Main » 2012 » June » 8 » Mujay manzoor hai maskan magar basti nahi sehra
8:50 PM
Mujay manzoor hai maskan magar basti nahi sehra
مجھے منظورہے مسکن، مگر بستی نہیں صحرا
کہ دنیا کے جھمیلوں پر، یہ دل راضی نہیں ہوتا

وہ کب تک روٹھتا رہتا اُسے کب تک مناتے ہم؟
اُسے اِس بار جانا تھا تو ہم نے بھی نہیں روکا

ہاں سازِ دل شکستہ ہے، مگر یہ بھی غنیمت ہے
سُنا ہے خوابِ جاں ٹوٹے تو کچھ باقی نہیں رہتا

تری راہوں پہ چلنے سے، جگر کا خون کرنے سے
زمانے نے بہت روکا دلِ وحشی نہیں سمجھا

یہ کج بحثی کے جو قصے مری نسبت ہیں ، جھوٹے ہیں
مرا قاتل گواہ میں نے گناہ تک بھی نہیں پوچھا

اجر صبرِ مسلسل کا یہ آنسو کیوں ڈبودے گا؟
نہیں نکلا جو صدیوں سے تو کیا اب بھی نہیں بہتا؟

سخن ور ایک لمحہ لفظوں کا جادو جگاتا ہے
مگر مجھ کو شکایت ہے، مرے دل کی نہیں کہتا
Category: غزلیات | Views: 222 | Added by: Crescent | Rating: 0.0/0
Total comments: 0
Only registered users can add comments.
[ Registration | Login ]
Search
Login In
Recent Posts-->
Popular Threads-->
Recent Photos-->
Poetry blog
Copyright Tehreer © 2017